اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


اڑانوں کا ہرا موسم

اسلام عظمی

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں

اِک بجھ گیا اِک اور دیا لے کے آ گئی

ملنے کی آس کچا گھڑا لے کے آ گئی

کن منزلوں کو شوقِ مسافت میں کھو دیا

کن راستوں پہ لغزشِ پا لے کے آ گئی

ٹک کر نہ بیٹھ پائے اسیرانِ رنگ و بو

خواہش فریبِ آب و ہوا لے کے آ گئی

اک آہوئے خیال بھی صحرا میں ساتھ ہے

خوشبوئے شہرِ یار صبا لے کے آ گئی

ورنہ تو بستیوں کی طرف چل پڑے تھے ہم

صحرا کی شام رنگِ حنا لے کے آ گئی

بدلا نہیں ہوا نے بھی مدت سے اپنا رُخ

خلقت عجیب باد نما لے کے آ گئی

دیتا رہے جواب کوئی تو سوال کا

یوں پتھروں میں ہم کو صدا لے کے آ گئی

اک پل میں کون دل کی رتیں ہی بدل گیا

بادِ شمال کس کا پتہ لے کے آ گئی


**


بگولے رہنما ہیں ، بادِ صحرائی سفر میں ہے

رکیں کیسے ؟ ہمارے ساتھ رسوائی سفر میں ہے

خبر بھی تو نہیں ہے ، اب کدھر کو جا رہے ہیں ہم

سرابوں کا سفر ہے ، آبلہ پائی سفر میں ہے

یہ بستی ہے کہ زنداں کچھ بھی تو پلے نہیں پڑتا

تھے کب پچھوا کے دن اور کب سے پروائی سفر میں ہے

کہاں سے آئیں کانوں کے لئے رم جھم سی آوازیں

جرس اک لفظِ پارینہ ہے ،  شہنائی سفر میں ہے

ازل سے تا ابد ہے کار فرما گردشِ دوراں

کہ نادانی حضر میں اور دانائی سفر میں ہے

اُسے صدیاں لگیں گی نیند سے بیدار ہونے میں

ابھی آغاز کا موسم ہے انگڑائی سفر میں ہے

کوئی آہٹ بناتی ہی نہیں اُمید کا موسم

کچھ ایسی چپ لگی ہے جیسے گویائی سفر میں ہے

اکیلے پن کا عظمیؔ ہو بھی تو احساس کیسے ہو

تسلسل سے ہماری شامِ تنہائی سفر میں ہے


**

***


ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول