اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


تمہاری آنکھوں نے جو کہی تھی

احمد راہی


ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں

    طویل راتوں کی خامشی میں مری فغاں تھک کے سو گئی  ہے
    تمہاری آنکھوں نے جو کہی تھی وہ داستاں تھک کے سو گئی  ہے

    مرے خیالوں میں آج بھی خوب عہد رفتہ کے جاگتے  ہیں
    تمہارے پہلو میں خواہش یاد پاستاں تھک کے سو گئی  ہے

    گلہ نہیں تجھ سے زندگی کے وہ نظریے ہی بدل گئے  ہیں
    مری وفا ، وہ ترے تغافل کی نوحہ خواں تھک سو گئی  ہے

    سحر کی امید اب کسے  ہے ،سحر کی امید ہو بھی کیسے
    کہ زیست امید و نا امیدی کے درمیاں تھک کے سو گئی  ہے

    نہ جانے کس ادھیڑ بن میں الجھ گیا ہوں کہ مجھ کو راہی
    خبر نہیں کچھ ، وہ آرزوئے سکوں کہاں تھک کے سو گئی  ہے
**


کوئی بتلائے کہ کیا  ہیں یارو
 ہم بگولے کہ  ہوا  ہیں یارو

تنگ  ہے وسعت صحرائے جنوں
ولولے دل کے سوا  ہیں یارو

سرد و بے رنگ  ہے ذرہ ذرہ
گرمیِ رنگ صدا  ہیں یارو

شبنمستان گل نغمہ میں
نکہت صبح وفا  ہیں یارو

جلنے والوں کے جگر  ہیں دل  ہیں
کھلنے والوں کی ادا  ہیں یارو

جن کے قدموں سے  ہیں گلزار یہ دشت
 ہم و ہی آبلہ پا  ہیں یارو
٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول