اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اول کتاب کا نمونہ پڑھیں


تحریرِ آبِ زر

زمانی اعتبار سے ۱۹۶۷ء  تا ۱۹۷۵ء تک کی غزلیں

اعجاز عبید

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                 ٹیکسٹ فائل

غزلیں




فصل آئی، زخم پھر تازے لگے
ہر طرف خوشبو اڑی، غازے لگے
کیا میں  بھرّاۓ گلے سے بولتا
ہاں مرے چہرے سے اندازے لگے
رات بھر کوئی نہیں آیا یہاں
صبح ہوتے گھر کے دروازے لگے
میں تو ایسا عشق میں گم بھی نہ تھا
جانے پھر کیوں مجھ پر آوازے لگے
بزم میں آیا تو تھے کیا کیا گماں
اب اٹھا بھی ہوں تو اندازے لگے


***


سیم و زر رکھئے، بہت لعل و جواہر رکھئے
رکھئے رکھئے مرے دیواں کے برابر رکھئے
یوں نہ ہو وقت جو پڑجائے تو خالی نکلے
اپنی آنکھوں کے خزانے کو بچا کر رکھئے
پھول مرجھانے پہ خوشبو نہیں دیتے صاحب
اپنے بالوں میں مرے ہونٹ سجا کر رکھئے
شعر کہنے کو سلگنا ہی نہیں ہے کافی
آنکھ میں جھیل، تو سینے میں سمندر  رکھئے
دل وہ اوسر ہے یہاں زخموں کی کھیتی کے لیے
آنسوؤں سے اسے ہر لمحہ بھگو کر رکھئے
ایک دیوانہ پھرے ہے کہ جسے عشق کہیں
رات بے رات قدم گھر سے نہ باہر رکھئے


***




کیا قہر ہے برسوں جو مرے ساتھ رہا بھی
اب اس سے نہیں رشتۂ تسلیم و دعا بھی
کیا شعلہ، دھواں کیا، کہ نہیں راکھ بھی باقی
 کیوں ڈرتی ہے ہم سوختہ جانوں سے ہوا بھی
اک آخری پل ٹوٹتے رشتے کے لیے روئیں
 مانا کہ حریفانہ سہی ، سامنے آ بھی
خود اپنے ہی بجھتے ہوئے شعلے کو جو بھڑکاؤں
اب میرے ہی دامن میں نہیں ایسی ہوا بھی
پھر ٹوٹ کے رویا، یہ مجھے علم تھا ورنہ
ہر فصلِ خزاں شاخ سے ہونا ہے جدا بھی

٭٭٭٭٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                 ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول