اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


تارِ انفاس

عبداللہ ناظرؔ
’تارِ انفاسِ غزل‘ مجموعے کا حصہ

ڈاؤن لوڈ کریں 

 ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں


کر لیا تھا مرگِ قبل از مرگ نے مائل مجھے

لے چلی ہے موجِ طوفاں جانبِ ساحل مجھے


آسرا  دے اے شعورِ سعیِ لاحاصل مجھے

وجہِ سرگرمی ہے  وہمِ  دوری منزل مجھے


جلوۂ جاناں سے کب دیکھا گیا غافل مجھے

سایۂ ابرِ رواں تھا پردۂ محمل مجھے


کیا  ستم ڈھایا  ترا گرنا مری آغوش میں

تجھ کو قاتل کہنے والے کہہ پڑے  قاتل مجھے


شمعِ بزمِ بیخودی اک آس تھی سو بجھ گئی

ظلمتِ تنہائی میں اب چھوڑ دے اے دل مجھے


اپنے گیسوئے پریشاں کی طرح  برہم نہ ہو

صدمۂ یک جنبشِ لب  ہو گیا مشکل مجھے


یوں تو حیراں ہے زمانہ رقصِ بسمل دیکھ کر

"بڑھ کے سینے سے نہ لپٹا لے مرا قاتل مجھے "


روز صبح و شام  خنداں ہیں مزاجِ حال پر

دور  کرتا  جا رہا  ہے  میرا  مستقبل مجھے


شوقِ اظہارِ  تمنا پھر  اجاگر  ہو گیا

پھر  کوئی  آواز  دیتا  ہے  سرِ محفل مجھے


جوئے خوں نے رکھ لیا ناظرؔ کی آنکھوں کا بھرم

جانِ جاں تم نے تو سمجھا پیار کے قابل مجھے

  ٭٭٭




خرد  کہتے  ہیں  کس کو ہے جنوں کیا

زمانہ کہہ  رہا  ہے میں کہوں کیا


کوئی سنتا  نہیں  میری  کہانی

لبوں پر  آ گیا سوزِ  دروں کیا


دھڑکنا  ہے  جہاں دل  کا  مقدّر

قرارِ  زندگی  کیا  ہے سکوں کیا


گماں  ہونے  لگا  قوسِ  قزح  پر

جوانی  ہو گئی  ہے  سرنگوں کیا

 

زباں  کھلوا  نہ میری اے ستمگر

نظر  آتا  نہیں حالِ  زبوں کیا

 

پگھلتا ہے  کہیں  پتّھر  کا دل بھی

کسی  ظالم  کو میں  آواز دوں کیا

 

ہنسی  جائز نہ رونا بر محل ہے

بڑی مشکل میں ہوں  ناظرؔ کروں کیا

٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول