اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


تارِ انفاس

عبداللہ ناظرؔ
’تارِ انفاسِ غزل‘ مجموعے کا حصہ

ڈاؤن لوڈ کریں 

 ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں


 

پرسشِ غم کا  تقاضا ہے نہ قربت کی طلب

 دشمنِ جاں سے بھلا کیوں ہو مروت کی طلب


میرا  ایماں ہے تری چشمِ عنایت کی طلب

 مقصدِ زیست نہیں ہے زر  و  دولت کی طلب


پاسِ  ناموسِ  وفا  راہنمائے دل ہے

 حسرتِ دید ہے اظہارِ حقیقت کی طلب


وہ بھی اب صیدِ ستم ہائے تغافل کیوں ہے

کھینچ لائی جسے صحراؤں میں رحمت کی طلب


خوبی حسن  قساوت  پہ اتر آتی ہے

 ہونے لگتی ہے جب انساں کو محبت کی طلب


بندگی  اپنی  ازل  سے ہے  شعارِ خِلقی

 خواہشِ مدح  کوئی  اور نہ اجرت کی طلب


آئینہ میں  مرا  ہمشکل بھی آئے نہ نظر

 اے جفا کیش عجب ہے یہ قیامت کی طلب


خار سے  کون  بچاتا  نہیں  اپنا  دامن

 برگِ گل سے نہ ہوئی کس کو نزاکت کی طلب


ہم کو عشرت کدۂ  قصر سے کیا مطلب ہے

 کب ہوئی خانہ بدوشوں کو سکونت کی طلب


محو  رکھتی ہے  شب  و  روز  ترے ناظرؔ کو

تیری تصویر سے بڑھ کر تری صورت کی طلب

٭٭٭




محبت میں تمہاری  بے رخی برداشت کرتے ہیں

بطورِ  قہرِ غیرت  ہی  سہی برداشت کرتے ہیں


گوارا خودستائی ہم  سے کب ہوتی ہے ناداں کی

کبھی چپ سادھ لیتے  ہیں کبھی برداشت کرتے ہیں


نہیں آساں  اٹھانا  ناز  مہ وش  نکتہ چینوں کے

" جو اہلِ ظرف ہوتے ہیں وہی برداشت کرتے ہیں "


بھلا ہم سا بھی  ہے  کوئی ،  کسی کو چاہنے والا

خدارا دیکھئے دل ،  آج بھی برداشت کرتے ہیں

 

ٹپک جاتا ہے خوں  اشکوں کے بدلے شدتِ غم سے

یہاں تک  ہر نفس کی  بے کلی برداشت کرتے ہیں


گزاری زندگی ہم نے سرابوں کے تعاقب میں

مسافر جی لگا کر  تشنگی برداشت کرتے ہیں


خبر ہے تم  زمانے میں  کہیں کا  بھی نہ رکھو گے

تقاضائے  وفا  ہے دشمنی برداشت کرتے ہیں


جہاں میں یوں تو ہیں کچھ لوگ ناظرؔ عیش و عشرت میں

ہمارا حال  یہ  ہے  زندگی برداشت کرتے ہیں


٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول