اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


سخناب

ماجد صدیقی


ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں


آنکھوں میں شرر سجانے آئے

پھر یاد گئے زمانے آئے

نخوت ہی بھلے جتانے آئے

آئے وہ کسی بہانے آئے

وہ لکّۂ ابر اِس بدن کی

کب پیاس بھلا بجھُانے آئے

احباب جتا کے عجز اپنا

دل اور مرا دکھانے آئے

تھا چارۂ درد جن کے بس میں

ڈھارس بھی نہ وہ بندھانے آئے

چھُوتے ہی سرِ شجر ثمر کو

ہر شخص ہمیں اُڑانے آئے

بالک سے، تمہارے دل کو ماجدؔ!

ہے کون جو تھپتھپانے آئے

٭٭٭



حق سمجھو جو بات زباں پر لاتے رہنا
رسم یہ منصوری ہے اِسے دُہراتے رہنا
برگ اور بار جھڑے تو کیا ہے، باغ کے پیڑو!
آنگن میں اُمید کے تم اِٹھلاتے رہنا
اِس کی شہ پر کاہے کو جی میلا کیجے
موسم کی تو خُو ہے یہی، گدراتے رہنا
سُن ہو جاؤگے للکار ستم کی سنتے
عزم کا جادو اپنے لہو میں جگاتے رہنا
ظلم کو سخت دلی کی آنچ سے ہی پیش آنا
اپنے کیے پر پھر چاہے پچھتاتے رہنا
دیکھنا وقت لگے زخموں کو مٹا ہی نہ ڈالے
رنج کی شدّت اِس شاطر کو جتاتے رہنا
لاکھ زباں پر جبر کے پہرے لگتے رہیں پر
ماجدؔ دل کا حال ہمیں ہے سناتے رہنا

٭٭٭



مکّاری کو کیا کیا ہیں کرتوت ہوئے
ریشم کے لچّھے بھی دیکھو سُوت ہوئے
خواب ہوئیں پریاں جتنی ایقان کی تھیں
واہمے کیا کیا اپنی خاطر بھُوت ہوئے
رہتے ہیں محصور مسلسل ہلچل میں
امیدوں کے شہر بھی ہیں بیروت ہوئے
جب سے باغ میں رسم چلی پیوندوں کی
سیدھے سادے تُوت بھی ہیں شہتوت ہوئے
منکر ہونے پر ماجدؔ بدنام ہمیں
جبر سہا تو ہم اچّھوں کے پُوت ہوئے
٭٭٭

٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول