اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


سمندر سوچتا ہے

رئیس الدین رئیسؔ

کلّیات

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں

الفاظ و معانی صفِ اعراب میں گم ہیں
اشعار مرے صفحہٴ اعجاب میں گم ہیں
تیراک سمندر کی تہوں میں ہیں کہاں گم
ساحل کے قریں حصہٴ پایاب میں گم ہیں
کیوں ڈھونڈتی پھر تی ہیں انہیں کالی گھٹائیں
صحرا تو ابھی خطہٴ سیراب میں گم ہیں
کاندھوں پہ قدم رکھ کے بلندی پہ ہیں کچھ لوگ
اک ہم ہیں کہ اسلاف کے آداب میں گم ہیں
کھل جائیں گے سچائی کے اسرار بھی آخر
دن رات یہ آنکھیں تو ابھی خواب میں گم ہیں
تھی جس سے رئیسؔ اپنی ہر اک رات منور
سب داغِ سیہ اب اُسی مہتاب میں گم ہیں
***

کون ہے آخر بتا میرا وہ ہوتا کون ہے
کشتیاں میری سمندر میں ڈبوتا کون ہے
زخم دیتا ہے تو کاری زخم دیتا ہے مجھے
ہاں مگر تیزاب سے زخموں کو دھوتاکون ہے
کوئی بھی ویراں جزیرے میں نہیں میرے سوا
پھر بکھر کر ٹوٹ کر یہ مجھ میں روتا کون ہے
خارزاروں ، سنگ زاروں میں بجز میرے بتا
ایسی میٹھی اور گہری نیند سوتا کون ہے
جلتے صحراہی فقط تعبیر ہوتے ہیں رئیسؔ
رات بھر آنکھوں میں تخم خواب بوتا کون ہے
حالانکہ میری مٹھی میں قید آفتاب تھا
پھر بھی دبیز اندھیرا مرا ہمر کاب تھا
خود آگہی کا مجھ پہ یہ کیسا عذاب تھا
ہر سانس میں امڈتا ہوا انقلاب تھا
پھیلی ہوئی تھی آب پہ یوں کائی جابہ جا
زخموں پہ جیسے خشک لہو کا نقاب تھا
خط اس کا تھا جہانِ معانی لئے ہوئے
ہر لفظ اپنے آپ میں پوری کتاب تھا
ہر اک صدف کو خواہشِ گوہر تو تھی مگر
کم مائیگی پہ اپنی پشیماں سحاب تھا
میرا مکاں ہی راہ کی دیوار بن گیا
ورنہ رواں دواں تو بہت سیلِ آب تھا
***

ڈاؤن لوڈ کریں 

  

 ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول