اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اول کتاب کا نمونہ پڑھیں


سفر باقی ہے

ادا جعفری

ترتیب: اعجاز عبید 

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

                                    غزلیں


ہر شخص پریشان سا حیراں سا لگے ہے

سائے کو بھی دیکھوں تو گریزاں سا لگے ہے


کیا آس تھی دل کو کہ ابھی تک نہیں ٹوٹی

جھونکا بھی ہوا کا ہمیں مہماں سا لگے ہے


خوشبو کا یہ انداز بہاروں میں نہیں تھا

پردے میں صبا کے کوئی ارماں سا لگے ہے


سونپی گئی ہر دولتِ بیدار اسی کو

یہ دل جو ہمیں آج بھی ناداں سا لگے ہے


آنچل کا جو تھا رنگ وہ پلکوں پہ رچا ہے

صحرا میری آنکھوں کو گلستاں سا لگے ہے


پندار نے ہر بار نیا دیپ جلایا

جو چوٹ بھی کھائی ہے وہ احساں سا لگے ہے


ہر عہد نے لکھی ہے میرے غم کی کہانی

ہر شہر میرے خواب کا عنواں سا لگے ہے


تجھ کو بھی ادا جرأتِ گفتار ملی ہے

تو بھی تو مجھے حرفِ پریشاں سا لگے ہے

٭٭٭



یہ فخر تو حاصل ہے برے ہیں کہ بھلے ہیں

دو چار قدم ہم بھی تیرے ساتھ چلے ہیں


جلنا تو خیر چراغوں کا مقدر ہے ازل سے

یہ دل کے کنول ہیں کہ بجھے ہیں نہ جلے ہیں


تھے کتنے ستارے کہ سرِ شام ہی ڈوبے

ہنگامِ سحر کتنے ہی خورشید ڈھلے ہیں


جو جھیل گئے ہنس کے کڑی دھوپ کے تیور

تاروں کی خنک چھاؤں میں وہ لوگ جلے ہیں


اک شمع بجھائی تو کئی اور جلا لیں

ہم گردشِ دوراں سے بڑی چال چلے ہیں

٭٭٭٭٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

 ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول