اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


نشاط و غم

صادق اندوری

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں

مٹے کچھ ایسے کہ موجود خاک و خس بھی نہیں

کہاں نشاں نشیمن کہیں قفس بھی نہیں

تلاش کرنا ہے خود ہم کو جادۂ منزل

کہ راہبر کوئی اب اپنے پیش رپس بھی نہیں

یہ روز روز کے طعنے، یہ صبح و شام کے طنز

سلوک دوست بجا، لیکن اس پہ بس بھی نہیں

ہر اک نفس پہ مسلط ہے تلخی ماحول

جئیں تو کیسے جئیں زندگی میں رس بھی نہیں

تباہ کر دے جو پاکیزگی کے دامن کو

بلند اتنا مگر شعلہ ہوس بھی نہیں

وہ اس مقام سے صادق پکارتے ہیں ہمیں

جہاں ہمارے تخیل کی دسترس بھی نہیں

""(مئی 1964)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ مجھ سے دور ہیں تکمیل آرزو کی طرح

رگوں میں دوڑتے پھرتے ہیںجو لہو کی طرح

ہزار قید و سلاسل کا اہتمام کریں

صداۓ حق کہیں چھپتی ہے مشکبو کی طرح

خلوص اور محبت کی کوئی بات چلے

وہ گفتگو تو کریں ہم سے گفتگو کی طرح

تری نگاہ نے جب سے گرا دیا ہے مجھے

پڑا ہوا ہوں میں ٹسٹے ہوۓ سبو کی طرح

بنا لیا ہے ترے غم کو میں نے خبر و حیات

بہت عزیزی ہے یہ مجھ کو آبرو کی طرح

نشان منزل مقصود کوئی دور نہیں

مگر تلاش کرے کوئی جستجو کی طرح

شعور فن نے کیا آفتاب صادق کو

پڑا تھا ورنہ یہ اک خاک بے نمو کی طرح

"" (اگست 1963)

*****

ترک وفا کا ان سے سوال آ رہا ہے آج

آئینہ خلوص میں بال آ رہا ہے آج

انسانیت عروج کی جانب ہے گام زن

حیوانیت کے سر پہ زوال آ رہا ہے آج

قدرت کی اک عنایت مختص ہے کیا حیات

ہر اک زبان پر یہ سوال آ رہا ہے آج

مدت ہوئی ہے ترک تعلق کیے ہوۓ

رہ رہ کے پھر بھی ان کا خیال آ رہا ہے آج

میرے جنوں کی منزل پرواز دیکھ کر

عقل و شعور دونوں کو حال آ رہا ہے آج

نزدیک آ گئی ستم نارسا کی موت

میری وفا کے رخ پہ جلال آ رہا ہے آج

صادقؔ بچھی ہوئی ہیں نگاہیں بصد خلوص

محفل میں کون اہل کمال آ رہا ہے آج 

٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول