اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اول کتاب کا نمونہ پڑھیں


کارِ ز یاں 

عالم خورشید

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں


ہمیشہ دل میں  رہتا ہے  کبھی گویا نہیں  جاتا

جسے  پایا نہیں  جاتا، اُسے  کھویا نہیں  جاتا


کسی کی جستجو ہی خاک چھنواتی ہے  دُنیا کی

یوں  ہی بحر و بیاباں  میں  دلِ جویا نہیں  جاتا


عجب سی گونج اٹھتی ہے  در و دیوار سے  ہر دم

یہ خوابوں  کا خرابہ ہے  یہاں  سویا نہیں  جاتا


کچھ ایسے  زخم ہیں  جن کو سبھی شاداب رکھتے  ہیں

کچھ ایسے  داغ ہیں  جن کو کبھی دھویا نہیں  جاتا


بہت ہنسنے  کی عادت کا یہی انجام ہوتا ہے

کہ ہم رونا بھی چاہیں  تو میاں  رویا نہیں  جاتا


ذرا سوچو! یہ دُنیا کس قدر بے  رنگ ہو جاتی

اگر آنکھوں  میں  کوئی خواب ہی بویا نہیں  جاتا


نہ جانے  اب محبت پر پڑی افتاد کیا عالمؔ

کہ اہلِ دل سے  دل کا بوجھ بھی ڈھویا نہیں  جاتا

٭٭٭



کہیں  پہ جسم کہیں  پر خیال رہتا ہے

محبتوں  میں  کہاں  اعتدال رہتا ہے


فلک پہ چاند نکلتا ہے او ر دریا میں

بلا کا شور، غضب کا اُبال رہتا ہے


دیارِ دل میں  بھی آباد ہے  کوئی صحرا

یہاں  بھی وجد میں  رقصاں  غزال رہتا ہے


چھپا ہے  کوئی فسوں گر سَراب آنکھوں  میں

کہیں  بھی جاؤ اسی کا جمال رہتا ہے


تمام ہوتا نہیں  عشقِ ناتمام کبھی

کوئی بھی عمر ہو یہ لازوال رہتا ہے


وصالِ جسم کی صورت نکل تو آتی ہے

دلوں  میں  ہجر کا موسم بحال رہتا ہے


خوشی کے  لاکھ وسائل خرید لو عالمؔ

دلِ شکستہ مگر پُر ملال رہتا ہے


٭٭٭٭٭٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول