اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اول کتاب کا نمونہ پڑھیں


حجابِ شعر

عبیدہ انجمؔ

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

 غزل، نظم

حریمِ دل سجانا چاہتی ہوں
انہیں مہماں بلانا چاہتی ہوں

میسر ہو جہاں تسکینِ خاطر
وہیں دنیا بسانا چاہتی ہوں

جبیں اپنی کسی کے در پہ رکھ کے
مقدر آزمانا چاہتی ہوں

کہاں تک دوریِ منزل کا خطرہ
ترے نزدیک آنا چاہتی ہوں

تمنا، آرزو کچھ ہے تو یہ ہے
کہ میں تجھ میں سمانا چاہتی ہوں

خوشا میرا صعودِ عشق انجم
فلک پر جگمگانا چاہتی ہوں


۔ ۔ ۔ ٭٭٭۔ ۔ ۔




برکھا رت


رنگیں فضائیں
بھیگی ہوائیں
دلکش مناظر
کالی گھٹائیں
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

سر سبز گلشن
سرشار صحرا
نکھرا ہوا ہے
پھولوں کا چہرہ
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

شاداب پتّے
مسرور غنچے
بربط بجا کر
گاتے ہیں نغمے
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

پھولوں کے رخ پر
رعنائیاں ہیں
رعنائیاں ہیں
رنگینیاں ہیں
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

فرشِ زمیں پر
گلپوش وادی
اوجِ فلک پر
قوسِ قزح بھی
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

پانی کی پریاں
آئیں فلک پر
موتی لٹاۓ
الفیں جھٹک کر
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

فرطِ طرب سے
طائر چہکتے
کلیاں چٹکتیں
گلشن مہکتے
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

گل اور بلبل
شاداں و فرحاں
ہیں تتلیاں بھی
رقصاں و لرزاں
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

بگلوں کا اڑنا
کالی گھٹا میں
کوئل کی کوکو
بھینی فضا میں
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

قالین دھانی
ہر سو بچھا ہے
صحنِ گلستاں
کیا دلربا ہے
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

انجم یہ رُت بھی
کتنی حسیں ہے
فرشِ زمیں کیا
عرشِ بریں ہے
برکھا کی رت ہے
کیسی سہانی

    ۔۔ اگست ۱۹۴۲ء
    شائع شدہ زیب النساء لاہور

***

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول