اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


غزل سرا

ماجد صدیقی


ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں

پرندوں سے تھا ہم سخن جو، وُہی بے زباں ہو گیا ہے

شجر کونپلوں کے نکلتے ہی نذرِ خزاں ہو گیا ہے

کسی برگ پر جیسے چیونٹی کوئی تیرتے ڈولتی ہو

ہواؤں کی زد پر کچھ ایسا ہی ہر آشیاں ہو گیا ہے

کسی ابر پارے کو بھی آسماں پر نہ اَب شرم آئے

بگولہ ہی جیسے سروںپر تنا سائباں ہو گیا ہے

سمٹتے ہوئے کور لمحوں کی بوچھاڑ برسا رہا ہے

مہِ نو بھی جیسے اُفق پر تنی اِک کماں ہو گیا ہے

لگے اِس طرح جیسے دل بھی شکم ہی کے زیرِنگیں ہو

کہ دربار بھی اَب تو، مُحبوب کا آستاں ہو گیا ہے

مسافت سے پہلے بھی کم تو نہ تھی کچھ گھُٹن ساحلوں کی

چلے ہیں تو اَب مشتِ کنجوس کی بادباں ہو گیا ہے

نجانے بھروسہ ہے کیوں اُس کی نیّت پہ ؔ دلوں کو

وہ حرفِ تسلی تلک جس کا سنگِ گراں ہو گیا ہے

٭٭٭



دیکھو تو یہ کیا لفظ مرے زیبِ زباں ہے
جس سے مرے پیکر پہ بھی سائل کا گماں ہے
رکھنے کو مرے کاسۂ اُمید کو خالی
جس سمت بھی جاتا ہوں وہیں شورِ سگاں ہے
یہ کیسا غضب ہے کہ جو خوشبو سا سبک تھا
وُہ خون بھی رگ رگ میں رُکا سنگِ گراں ہے
چھینی مرے قدموں سے یہ کس رُت نے روانی
قامت پہ یہ کیوں برف کے تودے سا گُماں ہے
کیا بزم میں مَیں حالِ دلِ زار چھپاؤں
ہونٹوں میں دباؤں بھی تو آنکھوں سے عیاں ہے

٭٭٭


رکھتا ہے کرم پر بھی گماں اور طرح کے

درپیش ہیں اِس دل کو زیاں اور طرح کے

اس دشتِ طلب میں کہ بگولے ہی جہاں ہیں

آتے ہیں نظر سروِ رواں اور طرح کے

تھا پیڑ جہاں قبر سی کھائی ہے وہاں اَب

سیلاب نے چھوڑے ہیں نشاں اور طرح کے

دل کا بھی کہا، خوف سے کٹنے کے نہ مانے

کرتی ہے ادا لفظ، زباں اور طرح کے

لگتا ہے کہ جس ہاتھ میں اَب کے یہ تنی ہے

دکھلائے کمالات کماں اور طرح کے

ہم لوگ فقط آہ بہ لب اور ہیں ماجدؔ

دربار میں آدابِ شہاں اور طرح کے


٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول