اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اولکتاب کا نمونہ پڑھیں


فائزہ

مصحف اقبال توصیفی

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

جنم جنم کی بات


(شاذؔ تمکنت کی شادی پر )


 اُنگلیاں نَے پر اُٹھیں ، نَے کو لبوں نے چوما

خامشی راگ میں تبدیل ہوئی

ساز سے راگ ہم آہنگ ہوا

نغمہ بیدار ہوا    ۱  ؎     

اپنے مامَن سے اُٹھے کیف ازل ، کیفِ ابد

ٹھنڈ کیں چاند ستاروں کی

سبک گام شمیم

سب اٹھے ساتھ چلے

ایک مرکز پر سمٹنے کے لیے

ایک بندھن کے جنم دینے کو

اب دُعا ہے کہ اُسی ساز اُسی راگ کے مانند اُٹھیں

اس طرح ساتھ قدم، پھُول کی مانند کھِلیں

اُٹھتے قدموں کے نشاں

طاقِ ماضی میں بسیں پھول، مہک کے ساتھ رہے !

    (۱؎ میراجی مرحوم)

٭٭٭


ایک نظم

جانے کس بات کا مفہوم اُلجھ کر اکثر

تیرے چلتے ہوئے ہونٹوں پہ سلگ اٹھتا تھا


تیرے ہونٹوں سے مرے کانوں تک

___ بول ملبوس ہوئے

___ کان پردہ ہوئے ، دیوار ہوئے

بات کے جسم کو عریاں نہیں دیکھا میں نے

جانے کا بات تھی، کیا تو نے کہی، میں نے سُنی

کون کہے_____ ؟ !!

٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول