اردو کی برقی کتابیں

صفحہ اول کتاب کا نمونہ پڑھیں


بادۂ نو

میکش ناگپوری

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

غزلیں

میرا دل چاک ہوا چاکِ گریباں کی طرح

اب گلستاں نظر آتا ہے بیاباں کی طرح

میرے سینے میں منّور ہوئے یادوں کے چراغ

بزمِ خوباں کی طرح شہرِ نگاراں کی طرح

کوئی مونس کوئی ہمدم کوئی ساتھی نہ ملا

میں پریشاں ہی رہا زلفِ پریشاں کی طرح

ختم ہوجائیگی ہر روشنی دنیا کی مگر

تم چمکتے ہی رہوگے مہہِ تاباں کی طرح

میں نے چاہا کہ سنبھل جائے طبیعت میری

دل ٹپکتا ہی رہا دیدئہ گریاں کی طرح

چشمِ الفت سے نہ دیکھا کبھی دنیا نے مجھے

میں کھٹکتا ہی رہا خارِ مغیلاں کی طرح

میرے ساقی ترے اندازِ کرم کے صدقے

اب تو میکشؔ بھی نظر آتا ہے انساں کی طرح


 ٭٭٭٭٭٭٭٭٭

دنیا میں آج کوئی بھی اپنا نہیں رہا
وہ ہم نہیں رہے کہ زمانہ نہیں رہا
اسرارِ حسن و عشق تو افسانہ ہوگئے
پردے کی بات یہ ہے کہ پردا نہیں رہا
جس دن سے ہوگئی ہے نگاہِ کرم نواز
گردش میں عاشقوں کا ستارا نہیں رہا
دریائے غم کا زورِ تلاطم نہ پوچھئے
طوفان رہ گیا ہے سفینہ نہیں رہا
کیوں کر قرار آئے کسی بے قرار کو
دل کو تری نظر کا سہارا نہیں رہا
طے ہوچکے ہیں مرحلے ناز و نیاز کے
اب امتیازِ قطرہ و دریا نہیں رہا
سچ تو یہ ہے کہ حضرتِ میکشؔ کے سر میں اب
سودا نہیں رہا کوئی سودا نہیں رہا

 ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭
زمیں کے چاند ستاروں کو نیند آتی ہے
حیات بخش بہاروں کو نیند آتی ہے
ابھی چمن کا مقدر چمک نہیں سکتا
ابھی چمن کی بہاروں کو نیند آتی ہے
جنازہ اشکوں کا پلکوں کے دوش پر ہے ابھی
اسی لئے تو نظاروں کو نیند آتی ہے
نظامِ بزمِ گلستاں بدل گیا شاید
چمن کی گود میں خاروں کو نیند آتی ہے
اب انقلابِ زمانہ کی فکر کون کرے
تری نگاہ کے ماروں کو نیند آتی ہے
نہ ڈوب جائے کہیں نبضِ زندگی میکشؔ
سحر کا وقت ہے تاروں کو نیند آتی ہے

 ٭٭٭٭٭٭٭٭

ڈاؤن لوڈ کریں 

   ورڈ فائل                                                                          ٹیکسٹ فائل

پڑھنے میں مشکل؟؟؟

یہاں تشریف لائیں۔ اب صفحات کا طے شدہ فانٹ۔

   انسٹال کرنے کی امداد اور برقی کتابوں میں استعمال شدہ فانٹس کی معلومات یہاں ہے۔

صفحہ اول